Headlines

 کارپوریٹ ٹیکس قانون اور فن ٹیک کے اثرات کے عنوان سے سیمینار کاروبار کو درپیش چیلنجز پر روشنی ڈالی گئی 

دبئی (طاہر منیر طاہر)  احمد الگباری چارٹرڈ اکاؤنٹنٹس کے تعاون سے یواے ای کارپوریٹ ٹیکس قانون اور فن ٹیک کے اثرات کے عنوان سے سیمینار کا انعقاد کیا گیا جس میں  صنعت کے ماہرین اور پیشہ ور افراد نے شرکت کی جس میں متحدہ عرب امارات میں اسلامی جمہوریہ پاکستان کے سفیرفیصل نیاز ترمذی نے بطورمہمانِ خصوصی شریک ہوئے۔

دیگر شرکاء اور مقررین میں محمد فرید، انتظار حسین، حمیرا کنول، مشہود علی ڈھلوں، محمد رضوان، محمد اکرام، قمر ملک، قمر حسین،  محمد شکیل خان،  سید سلیم اختر،  ڈاکٹر فرخ حبیب، سید آصف زمان، عالیہ نور، خالد حسین چوہدری،  قمر ملک، مشہود علی ڈھلوں، بشیر احمد فاروق، اقبال داؤد، مشہود علی ڈھلوں اور شبیر مرچنٹ شامل تھے- سیمینار کے دوران مقررین نے اپنے متعلقہ موضوعات پر قابل قدر و بصیرت تقا ریرکیں اور متحدہ عرب امارات میں فنٹیک، اکاؤنٹنگ اور ٹیکسیشن کے بدلتے ہوئے منظرنامے پر روشنی ڈالی۔ 
سید آصف زمان نے اکاؤنٹنگ اور آڈیٹنگ انڈسٹری میں ابھرتی ہوئی ٹیکنالوجیز جیسا کہ بلاک چین، بگ ڈیٹا، ڈیٹا اینالیٹکس، اے آئی، اور کلاؤڈ بیسڈ اکاؤنٹنگ سافٹ ویئر کے تبدیلی کے کردار پر روشنی ڈالی۔ انہوں نے پیشہ ور افراد کو مسابقتی رہنے کے لئے ان ٹیکنالوجیز کے ساتھ اپ ڈیٹ رہنے کی ضرورت پر زور دیا۔ڈاکٹر فرخ حبیب نے اپنے سیشن میں ڈیجیٹل اثاثوں بشمول کریپٹو کرنسی کے بارے بتایا- انہوں نے ڈیجیٹل اثاثوں سے متعلق ریگولیٹری فریم ورک کی وضاحت کی اور بتایا کہ کس طرح الف ٹیکنالوجیز اس شعبے میں مشاورتی خدمات فراہم کر سکتی ہیں۔
پاکستان بزنس کونسل دبئی کے صدر اور تقریب کے مہمان سپیکر اقبال داؤد نے نئے ضوابط کے حوالے سے متحدہ عرب امارات میں کاروبار کو درپیش چیلنجوں پر روشنی ڈالی۔یو اے ای میں اسلامی جمہوریہ پاکستان کے سفیر فیصل نیاز ترمذی نے جو تقریب کے مہمان خصوصی تھے نے تمام شرکاء اور ICMA UAE برانچ کونسل اور احمد الگباری چارٹڈ اکاؤنٹنٹس کی طرف سے دعوت کا شکریہ ادا کیا۔ انہوں نے شرکاء کو پاکستانی کمیونٹی کی سہولت کے لئے متحدہ عرب امارات میں پاکستانی سفارت خانے کے کردار کے بارے اگاہ کیا-
کلیدی مقرر عالیہ نور نے "UAE کارپوریٹ ٹیکس "دی گڈ، دی بیڈ اینڈ دی اگلی” کے موضوع پر اپنی گفتگو سے سامعین کو مسحور کر دیا، قانون کی باریکیوں اور متحدہ عرب امارات میں کام کرنے والے کاروباروں پر اس کے اثرات کے بارے میں بتایا۔ اس نے رہائشی اور غیر رہائشی افراد، قابل ٹیکس اور مستثنی آمدنی، اور کارپوریٹ ٹیکس رجسٹریشن کی آخری تاریخوں کی وضاحت کی۔ انہوں نے شرکاء کے سوالات کے جوابات بھی دیئے۔
سیلانی ویلفیئر انٹرنیشنل ٹرسٹ کے چیئرمین اور تقریب کے مہمان خصوصی بشیر احمد فاروق نے شرکاء کو سیلانی ٹرسٹ کے منصوبوں کے بارے میں بتایا جس میں پاکستان بھر میں غریبوں کے لئے کھانے کے بہت سے پروگرام چلانا بھی شامل ہے۔ انہوں نے بتایا کہ کس طرح سیلانی ٹرسٹ آئی ٹی انڈسٹری میں کام کر رہا ہے اور آئی ٹی سروسز کی ایکسپورٹ میں مصروف ہے۔ انہوں نے سیلانی ٹرسٹ اور حکومت پاکستان اور پاکستان میں پروفیشنل اکاؤنٹنگ انسٹی ٹیوٹ کے درمیان تعاون کی وضاحت کی۔
معزز مہمانوں، مقررین، سپانسر اور آرگنائزنگ کمیٹی کے ممبران کو کمیونٹی اور سیمینار کے لیے ان کی گراں قدر خدمات کو سراہنے کے لیے شیلڈز پیش کی گئیں۔ 
تقریب کا اختتام مشہود علی ڈھلوں نے دلکش اختتامی کلمات پیش کرتے ہوئے کیا- تقریب کو کامیاب بنانے پر تمام مہمانوں، مقررین، شرکاء، اسپانسرز اور آرگنائزنگ کمیٹی کا شکریہ ادا کیا گیا-
سیمینار نے بامعنی بات چیت، نیٹ ورکنگ کے مواقع، اور متحدہ عرب امارات میں فنٹیک اور ٹیکسیشن کے بدلتے ہوئے منظرنامے کی گہری تفہیم کے لیے ایک پلیٹ فارم فراہم کیا۔ شرکاء ان متحرک شعبوں کی پیچیدگیوں کو نیویگیٹ کرنے کے لیے افزودہ علم اور بصیرت کے ساتھ چلے گئے۔ یہ تقریب احمد الگباری چارٹرڈ اکاؤنٹنٹس کے ٹائٹل اسپانسر کے بھرپور تعاون سے ممکن ہوئی۔ معززین اور شرکاء نے ایسے کامیاب سیمینار کے انعقاد پر سید سلیم اختر اور احمد الگباری چارٹرڈ اکاؤنٹنٹس کی تعریف کی۔

Leave a Reply